ہم کہاں کھڑے ہیں؟

            مورخ کا قلم تاریخ لکھ رہا ہے۔

            بوڑھا آسمان پر اپنی تجربہ کار آنکھوں سے ٹکٹکی باندھے دیکھ رہا ہے۔زمین گوش برآواز ہے۔

            فرشتے جنت کے دریچوں سے گواہی دینے کے لئے یہ سارے مناظر اپنے ذہن کی لائبریری میں محفوظ کررہے ہیں۔

            دنیا کے میدان میں دو گروہوں میں ایک تاریخی معرکہ لڑا جارہا ہے۔

            ایک گروہ سانپ سے زیادہ زہریلی زبانیں نکالے منہ سے کفر کے شعلے اگلتا، ہذیان بکتا، تاج و تخت ختم نبوت پر حملہ آور ہے۔

            یہ قادیانیوں کا گروہ ہے۔      یہ لوگ مرزا قادیانی کے امتی ہیں۔

            دوسرا گروہ اپنی جانیں ہتھیلی پررکھے ان کا راستہ روکے کھڑا ہے۔                       

ان سے پنجہ آزمائی کررہا ہے۔

            ان سے برسر پیکار ہے۔       ان سے گتھم گتھا ہے۔

            یہ گروہ جناب محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے جانثاروں کا گروہ ہے۔                

یہ لوگ رسول رحمت صلی اللہ علیہ وسلم کے امتی ہیں۔

لیکن دنیا کے میدان میں لڑے جانے والے اس معرکہ کو دیکھنے والے کروڑوں تماشائی بھی ہیں۔

            یہ تماشائی کون ہیں؟                       یہ کس کے امتی ہیں؟

            یہ کس کا کلمہ پڑھتے ہیں؟   کل قیامت کے دن یہ لوگ کس کے ساتھ اٹھائے جائیں گے؟

            کل یہ کس سے شفاعت کا سوال کریں گے؟

            کل یہ کس سے جام کوثر مانگیں گے؟  کل یہ لوگ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے جام کوثر مانگیں گے؟

            شفاعت کا سوال کریں گے تو

            اگر وہاں پر ساقی کوثر، شافع محشر صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے کہہ دیا کل جب دنیا میں میرے تاج و تخت ختم نبوت پر حملہ ہوا تھا تو تم فقط تماشائی تھے۔

            اگر تمہارے ساتھ میرا تعلق ہوتا تو میرے جانثاروں کے ساتھ ہوتے۔ میرے تاج و تخت ختم نبوت کی حفاظت کرتے لیکن تم تو صرف تماشائی تھے۔     

            جائو اب جاکے جہنم میں تماشا بن جائو۔           

            ہائے لوگو! اس وقت کیا حال ہوگا؟                  اس وقت کتنی قیامتیں ٹوٹ پڑیں گی؟

            اس وقت کتنے آسمان سروں پر گریں گے۔                    

لوگو آئو ! جلدی سے خود کو پرکھیں ۔

            کہیں میں تماشائی تو نہیں؟               کہیں آپ تماشائی تو نہیں؟

            لوگو! موت خاموش قدموں کے ساتھ ہاتھوں میں تلوار لئے برق رفتاری سے ہماری جانب لپکی آرہی ہے اور وہ عنقریب اپنی تلوار سے ہماری رگ حیات کاٹ دے گی۔ اور اگلے لمحے ہم جواب دینے کے لئے کٹہرے میں کھڑے ہوں گے۔

آئو اس سے پہلے کہ موت ہماری حیات کو ذبح کردے۔ ہم قادیانیوں کے خلاف کام کر کے اپنا نام عاشقان رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی فہرست میں درج کرا لیں۔

            خدا کرے اس فہرست میں آپ کا بھی نام درج ہوجائے۔

            میرا نام بھی درج ہوجائے۔

            جلدی کیجئے۔ بہت جلدی کیجئے۔!!

            مورخ کا قلم لکھ رہا ہے۔

            فرشتے جنت کے دریچوں سے گواہی دینے کیلئے یہ سارے مناظر اپنے ذہن کی لائبریری میں محفوظ کررہے ہیں۔!!!

            موت کی بے آواز تلوار کی نوک زندگی کی شہ رگ کے بہت قریب پہنچ چکی ہے۔!!!